فیس بک پر مذاق آڑانے کیلئے “ہاہا” کا ایموجی استعمال کرنا حرام قرار


0

اگر آپ سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بک پر کسی کی پوسٹ پر مذاق اڑانے کی نیت سے “ہاہا” والے ایموجی کا استعمال کررہے ہیں تو ٹھہر جائیں، کیونکہ آپ ایک حرام کام کر رہے ہیں۔ ایسا کہنا ہے معروف بنگلادیشی عالم مفتی دین احمد اللہ کا، جنہوں نے اس پر ایک فتویٰ جاری کرتے ہوئے، اسے حرام قرار دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بک کا شمار دنیا کی چند مقبول ترین ویب سائٹس میں ہوتا ہے، آج دنیا میں تقریباً 2 کروڑ 85 لاکھ کے قریب افراد اس ویب سائٹ کو استعمال کر رہے ہیں۔ اس ویب سائٹ پر منفرد قسم کے بےشمار فیچرز بھی موجود ہیں، جن میں سے ایک فیچر ایسا بھی ہے، جس میں صارف کسی پوسٹ پر اپنے جذبات اور کیفیت کا بھی اظہر کرسکتا ہے، یعنی ہنسنے، رونے، غصے، آفسوس، حیران والے جیسے فیچرز شامل ہیں۔ لیکن معروف بنگلادیشی عالم دین نے اس حوالے سے ایک ویڈیو پیغام جاری کیا ہے، جس میں انہوں نے اس فیچرز کے استعمال کو قرار دے دیا ہے۔

Image Source: Facebook

مفتی احمد اللہ کے مطابق لوگ / صارفین اس فیچرز کو عموماً دوسروں کی تضحیک کیلئے استعمال کرتے ہیں، جس کی اسلام بالکل اجازت نہیں دیتا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ہاں البتہ اگر کوئی اس ایموجی کو کسی مزاحیہ پوسٹ پر استعمال کرتا ہے، اور اس کے استعمال کا مقصد پوسٹ ڈالنے یا شئیر کرنے والے کا مذاق اڑانا نہیں ہے، تو پھر اس کا استعمال جائز ہے۔ لیکن اگر اس ایموجی کا استعمال کسی کے مذاق آڑانے کیلئے ہے، تو پھر جائز نہیں ہے، اس میں مذاق آڑانے کی کوئی اجازت نہیں ہے۔

Image Source: Forbes

اس سلسلے میں بات کرتے ہوئے مفتی احمد اللہ نے مزید کہا کہ میں آپ سے درخواست کرتا ہے، خدا کے لئے اس عمل سے دور رہیں، اگر آپ کسی مسلمان کا دکھائیں گے، تو یقیناً وہ آپ سے بدزبانی کرسکتا ہے، لہٰذا اس عمل سے اجتناب کریں۔

Image Source: Youtube

مفتی احمد اللہ کی اس ویڈیو پر بنگلادیش میں کافی ملا جلا ردعمل دیکھا جا رہا ہے، کچھ لوگوں کی جانب سے جہاں اسے اصلاح تصور کیا جا رہا ہے تو وہیں کچھ لوگوں کی جانب سے اس پر غیر سنجیدگی کا اظہار کیا جا رہا ہے اور وہ اس پر “ہاہا” ایموجی سمیت مخلتف مزاحیہ ردعمل دے رہے ہیں۔

واضح رہے مفتی احمد اللہ بنگلادیش کے ایک معروف عالم دین ہیں، جو انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا پر اپنی کافی مقبولیت رکھتے ہیں، یوٹیوب اور فیس بک پر ان کے تقریباً 22 لاکھ کے قریب فالورز ہیں۔ وہ سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر مختلف موضوعات پر اپنے ویڈیو پیغام جاری کرتے رہتے ہیں۔

یاد رہے کچھ عرصہ قبل ملک کی معروف دینی درسگاہ جامعہ علوم اسلامیہ بنوریہ ٹاؤن کے دارالافتاء کی جانب سے ایک شہری کے مشہور ومعروف ویڈیو گیم پب جی کے متعلق سوال کے جواب میں ایک فتویٰ جاری کیا گیا تھا، جس کے مطابق پب جی کھیلنے والا دائرہ اسلام سے خارج ہو جاتا ہے۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
1
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format