“پب جی گیم” کھیلنے والا دائرہ اسلام سے خارج ہوجاتا ہے۔ فتویٰ جاری


1
5 shares, 1 point

آج کے دور میں اگر آپ کسی سے اس کے پسندیدہ مشغلہ کے بارے میں پوچھیں گے تو یقیناً زیادہ تر کا ایک ہی جواب ہوگا کہ فارغ اوقات میں موبائل فونز یا الیکٹرانکس ڈیوائسز پر آن لائن گیمز کھیلنا کیونکہ اب دنیا اس حدتک بدل گئی ہے کہ لوگوں کے پاس یا تو وقت کی کمی ہے ترجیحات بدل گئیں۔ یہی وجہ ہے کہ دنیا میں آن لائن گیمز کھیلنے کے رجحانات میں کافی اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

دنیا میں کھیلے جانے والے چند مشہور آن لائن ویڈیو گیمز میں ایک نام پب جی کا ہے، جس نے کم وقت میں دنیا میں مقبولیت حاصل کری تاہم اس حوالے سے کچھ خراب نتائج کی خبریں میں آنا شروع ہوئی یعنی لوگوں کا خودکشی کرلینا، کھیلتے کھیلتے دماغ کا کام کرنا چھوڑ جانا وغیرہ وغیرہ ۔ یہ خبریں بعدازاں روز کی بنیاد پر آنے لگیں جس کے باعث اس پر کئی ملکوں میں پابندی لگی، کچھ عرصہ قبل پاکستان میں بھی اس پر پابندی عائد کی گئی بعدازاں اسے پھر اٹھا لیا گیا۔

تاہم اب پب جی کے حوالے سے ایک نئی اور نہایت اہم بات سامنے آئی ہے جوکہ کراچی کی معروف دینی درسگاہ جامعہ علوم اسلامیہ بنوری ٹاؤن کا ایک فتویٰ ہے ،جس کے مطابق “پب جی گیم” کھیلنے والا دائرہ اسلام سے خارج ہوجاتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ملک کی معروف دینی درسگاہ جامعہ علوم اسلامیہ بنوریہ ٹاؤن کے دارالافتاء سے ایک شہری کی جانب سے سوال پوچھا گیا کہ گزشتہ جمعہ کو ہماری مسجد کے امام صاحب نے بیان میں فرمایا کہ جو شخص پب جی گیم کھیلتا ہے وہ دائرہ اسلام سے خارج ہوجاتا ہے، اس کا نکاح باقی نہیں رہا، یعنی جو احکام اسلام سے نکلنے کی صورت میں لگتے ہیں وہ سب بیان کئے گئے، براہ مہربانی اس بارے میں رہنمائی فرمائیں ۔

Image

سوال کے جواب میں دارالافتاء کی جانب سے فتویٰ جارج کیا گیا ہے، جس میں لکھا گیا ہے کہ معلومات کے مطابق پب جی گیم میں بعض اوقات پاور حاصل کرنے کے لئے گیم کھیلنے والوں کو بتوں کے سامنے پوجا کرنی پڑتی ہے اور گیم کھیلنے والے شخص کا گیم میں موجود اپنے کھلاڑیوں کو پاور حاصل کرنے کے لئے بتوں کے سامنے جھکنا اور بتوں کی پوجا کروانا اس کا اپنا فعل ہے۔ گیم میں نظر آنے آنے والا کھلاڑی اسی گیم کھیلنے والے کا عکاس اور ترجمان ہے اور مسلمان کا توحید کا عقیدہ ہوتے ہوئے بتوں کے سامنے جھکنا شرک فی الاعمال ہے اور گیم میں یہ عمل کرنے سے رفتہ رفتہ بتوں کے سامنے جھکنے کی قباحت بھی دل سے نکل جائے گی، لہذا یہ گیم کھیلنا ناجائز ہے اور پب جی گیم میں بتوں کے سامنے جھک کر پاور حاصل کرنا شرک ہے اور عمداً اس کو کرنے والا دائرہ اسلام سھ خارج ہوجائے گا، ایسے شخص پر تجدید ایمان اور شادی ہونے کی صورت میں تجدید نکاح بھی ضروری ہے۔

ساتھ ہی ساتھ فتوے کے آخر میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ اگر کوئی شخص پب جی گیم میں شرک کا کوئی عمل نہیں کرے تو پھر بھی شرک پر راضی رہنے اور کئی اور مفاسد پر مشتمل ہونے کی وجہ سے پب جی گیم کھیلنا جائز نہیں ہے۔

واضح رہے یہ فتویٰ سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر کافی وائرل ہے، اس نے لوگوں کی بڑی تعداد کی جانب سے شئیر کئے جارہا ہے۔


Like it? Share with your friends!

1
5 shares, 1 point

What's Your Reaction?

hate hate
2
hate
confused confused
2
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
2
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format