دنیا کی ایک ارب آبادی کس مرض کا شکار ہے؟ڈبلیو ایچ او کی رپورٹ جاری


0

جسمانی صحت کے ساتھ دماغی طور پر صحتمند ہونا بھی نہایت ضروری ہے ، اس سلسلے میں عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے اپنی جاری کردہ رپورٹ میں یہ انکشاف کیا ہے کہ دنیا بھر میں تقریباً ایک ارب لوگ ذہنی امراض کی کسی نہ کسی قسم میں مبتلا ہیں۔ ان تازہ ترین اعداد وشمار اس حوالے سے اور بھی زیادہ پریشان کن بات یہ ہے کہ ان ایک ارب افراد میں سے ہر ساتواں شخص نوجوان ہے نیز کورونا وائرس کی وباء کے پہلے سال میں ڈپریشن اور بے چینی جیسے مسائل کی شرح میں 25 فیصد سے زائد اضافہ ہوا۔

اس حوالے سے عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر کا کہنا ہے کہ ہر ایک فرد کی زندگی کسی نہ کسی کی ذہنی صحت کو متاثر کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اچھی ذہنی صحت، اچھی جسمانی صحت کی عکاس ہوتی ہے اور یہ نئی رپورٹ ہمارے رویوں میں تبدیلی کو ناگزیر بناتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ذہنی صحت اور صحت عامہ، انسانی حقوق اور سماجی اقتصادی ترقی کے درمیان تعلق کو ختم نہیں کیا جاسکتا جس کا مطلب ہے کہ ذہنی صحت کے حوالے سے پالیسی اور حکمت عملی کو تبدیل کرنا چاہیے تاکہ ہر جگہ افراد، کمیونٹیز اور ممالک کو حقیقی اور اہم فوائد میسر آسکیں۔

Image Source: Unsplash

انہوں نے کہا کہ ذہنی صحت کے لیے سرمایہ کاری سب کے لیے بہتر زندگی اور مستقبل میں سرمایہ کاری کے مترادف ہے۔اس حوالے سے عالمی ادارہ صحت نے مزید ممالک پر زور دیا ہے کہ وہ بگڑتے ہوئے حالات کا مقابلہ کرنے کے لیے تیاری کریں۔

Image Source: Unsplash

اس رپورٹ میں عالمی ادارہ صحت نے 2019 کے تازہ ترین دستیاب عالمی اعدادوشمار کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ کورونا وباء کی آمد سے پہلے ہی ذہنی صحت کے علاج کے ضرورت مند افراد کے صرف ایک چھوٹے سے حصے کو مؤثر، سستی اور معیاری سہولیات تک رسائی حاصل تھی۔ ڈبلیو ایچ او نے مثال پیش کی کہ دنیا بھر میں نفسیاتی امراض میں مبتلا 70 فیصد سے زائد افراد کو وہ مدد نہیں ملتی جس کی انہیں ضرورت ہے۔ امیر اور غریب ممالک کے درمیان فرق صحت کی دیکھ بھال تک غیر مساوی رسائی سے بھی نمایاں ہوتا ہے، زیادہ آمدنی والے ممالک میں نفسیاتی بیماری کے شکار ہر 10 میں سے 7 افراد علاج کروا لیتے ہیں جبکہ کم آمدنی والے ممالک میں یہ شرح صرف 12 فیصد ہے۔

Image Source: Unsplash

اس کے علاوہ ڈپریشن کے علاج کے حوالے سے زیادہ آمدنی والے ممالک سمیت تمام ممالک میں ڈپریشن کے شکارصرف ایک تہائی افراد کو باقاعدہ ذہنی صحت کی دیکھ بھال ملتی ہے۔رپورٹ کے مطابق زیادہ آمدنی والے ممالک 23 فیصد کیسز میں ڈپریشن کا ’کم سے کم مناسب‘ علاج فراہم کرتے ہیں لیکن کم اور درمیانی آمدنی والے ممالک میں یہ شرح محض 3 فیصد ہے۔

سربراہ ڈبلیو ایچ او کے سربراہ کا کہنا ہے کہ ہمیں دماغی صحت کے حوالے سے آگاہی اور اس کی حفاظت کے لیے اپنے رویوں، عمل اور طریقہ کار کو تبدیل کرنے اور اس حوالے سے ضرورت مند افراد کی مدد اوران کی دیکھ بھال کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم اپنی ذہنی صحت پر اثرانداز ہونے والے ماحول کو تبدیل کرکے اور کمیونٹی کی سطح پر ذہنی صحت کی عالمی سہولیات کی رسائی دے کر ایسا کرسکتے ہیں اور کرنا چاہیے۔

مزید برآں ، پاکستان میں بھی پریشان کن حالات، غربت، بے روزگاری، دہشت گردی، امن و امان کا مسئلہ، مہنگائی، اور اس جیسے کئی مسائل لوگوں کو مختلف ذہنی پیچیدگیوں میں مبتلا کر رہے ہیں۔ ماہرین کے مطابق اگر ابتداء میں ہی ذہنی و نفسیاتی امراض کی تشخیص کرکے ان کا مناسب علاج کیا جائے تو ان پر قابو پایا جاسکتا ہے بصورت دیگر یہ خطرناک صورت اختیار کرسکتے ہیں۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format