سندھ میں 36 خیمہ اسکول چلانے والا باہمت نوجوان جنید کھوسو


0

سندھ یونیورسٹی جامشورو کے طالب علم اور حیدرآباد کے رہائشی جنید کھوسو تعلیم سے محروم بچوں کو علم کے زیور سے آراستہ کرنے کے لیے ایک منفرد آئیڈیا پر کام کر رہے ہیں اور وہ ان غریب بچوں کو تعلیم دے رہے ہیں جو غربت کی وجہ سے اسکول نہیں جاتے تھے اور سڑکوں پر کھیل کود میں اپنا وقت ضائع کرتے رہتے تھے۔ ان بچوں کو پڑھانے کیلئے جنید کھوسو اور ان کے چند دوستوں نے مل کر سات سال پہلے خیمہ اسکولوں کی بنیاد رکھی اور انہوں حیدرآباد کے علاقے قاسم آباد میں ایک خیمہ اسکول قائم کرکے ان بچوں کو تعلیم دینا شروع کردی۔

کچھ عرصے بعد جنید کھوسو اور ان کے دوستوں نے مل کر ویلیو آف ہیومن بینگ ویلفیئر نامی ایک سماجی تنظیم قائم کرکے قاسم آباد میں دوسرا خیمہ اسکول بھی قائم کرلیا۔ یوں آہستہ آہستہ یہ خیمہ اسکول کھولتے گئے اور اس وقت صرف قاسم آباد میں 11 خیمہ اسکول ہیں، جبکہ مختلف اضلاع کے کئی شہروں بشمول حیدرآباد، جامشورو، ٹندو محمد خان، ٹنڈو جام، تھر کے نگرپارکر اور نئوں کوٹ سمیت 36 خیمہ اسکول چل رہے ہیں جن میں ساڑھے 11 ہزار بچے زیر تعلیم ہیں۔ ان میں سے ایک اسکول حیدرآباد شہر سے چند کلومیٹر دور ٹنڈو فضل روڈ پر واقع پٹھان ولیج میں قائم ہے، جہاں اینٹوں کے بھٹے پر کام کرنے والے مزدوروں کے بچوں کو مفت تعلیم دی جاتی ہے۔

Image Source: Facebook

دیکھا جائے تو اندرون سندھ میں ایسے ہزاروں بچے ہیں جن کا تعلق غریب خاندانوں سے ہے اور وہ تعلیم حاصل نہیں کرتے اور سڑکوں پر گھومتے رہتے ہیں۔ ایسے بچے اکثر جرائم پیشہ فرد کے ہتھے چڑھ جاتے ہیں جو انہیں منشیات فروشی، بھیک مانگنے اور چوری کرنے پر لگا دیتے ہیں اور اس طرح یہ بچے کم عمری میں ہی جیل چلے جاتے ہیں۔ ان بچوں کو برائیوں سے بچانے کیلئے جنید کھوسو کا یہ اقدام قابل ستائش ہے جو ان بچوں کو بنیادی تعلیم دے کر سرکاری اسکولوں میں داخل کراتے ہیں تاکہ وہ اپنا تعلیم سلسلہ جاری رکھ سکیں۔

Image Source: Facebook

بلاشبہ جنید کھوسو کے لئے یہ سفر کسی چیلینج سے کم نہیں اور ان بچوں کو تعلیم کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے انہیں آئے دن مشکلات کا سامنا بھی رہتا ہے جیسا کہ ان کے خیمہ اسکولوں میں بچوں کو کتاب، کاپیاں اور اسٹیشنری کی ضرورت ہے، کئی خیمہ اسکول بارشوں کی وجہ سے ٹوٹ چکے ہیں ، محدود وسائل کی وجہ سے وہ اساتذہ کی تنخواہ وقت پر ادا نہیں کر پارہے چنانچہ اگر حکومت یا محکمہ تعلیم سندھ جنید کھوسو کی مدد کرے اور ان کے چھوٹے خیمہ اسکولوں کو ایک بڑے اسکول میں تبدیل کرلیں تو کئی غریب بچے مفت تعلیم حاصل کرسکتے ہیں۔

علاوہ ازیں ،عوام بھی ان بچوں کیلئے کتابیں ، کاپیاں اور دیگر ضروری اشیاء ان کی تنظیم کو عطیہ کرکے اس کارخیر میں اپنا حصہ ڈال سکتی ہے۔

خیال رہے کہ جنید کھوسو کی طرح وزیرستان کے بھی ایک باہمت نوجوان محمد علی نے وطن سے محبت کی اعلیٰ مثال قائم کی ہے۔ انہوں نے صوبہ خیبر پختونخواہ کے ایک چھوٹے سے گاؤں میں جہاں نا تو بنیادی سہولیات ہیں اور نا ہی بچوں کی تعلیم کیلئے کوئی مناسب بندوبست وہاں بچوں کو تعلیم دینے کا بیڑا اٹھایا اور علاقے کی چھوٹی سی مسجد کو ہی درسگاہ بنالیا۔ محمد علی جو خود کوئی اعلیٰ تعلیم یافتہ نہیں لیکن اپنی محنت اور لگن سے گاؤں کے بچوں کو علم کی دولت سے روشناس کروارہے ہیں۔ ان کے مطابق مسجد میں کھولے گئے اسکول میں 120 بچے زیر تعلیم ہیں، جن میں 40 لڑکیاں ہیں جبکہ وہ اس اسکول کے واحد استاد ہیں جو تین گھنٹے کی دو شفٹوں میں بچوں کو پڑھتے ہیں۔

Story Courtesy: Express News


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
1
omg
win win
1
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format