معیاری اسکرپٹ کی کمی نے ہمیں مایوس کن حالت میں چھوڑ دیا ہے,روبینہ اشرف


0

پاکستان ڈرامہ انڈسٹری کا دن بدن گرتا ہوا معیار جہاں آئے روز تنقید کی زد میں رہتا ہے وہیں تجربہ کار اداکار اور فنکار بھی اب نشر ہونے والے موجودہ ڈراموں کی کہانیوں اور مواد سے خوش نظر نہیں آتے ہیں۔ حال ہی میں چند دیگر سینئر اداکاروں کی تنقیدوں کے بعد اب اداکارہ روبینہ اشرف نے بھی گزشتہ چند سالوں سے نشر ہونے والی چیزوں پر شدید تنقید اور تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

لیجنڈری اداکارہ روبینہ اشرف کی بات کی جائے تو ان کا شمار پاکستان ڈرامہ انڈسٹری کی ماضی کی صف اول کی اداکاراؤں میں ہوتا ہیں۔ اداکارہ نے چند روز قبل اداکار احسن خان کے معروف پروگرام ٹائم آؤٹ ود احسن خان میں اپنی بیٹی، اداکار مینا طارق کے ساتھ شرکت کی اور دلچسپ موضوعات پر تفصیلاً گفتگو کی۔

Image Source: Twitter

اداکاری کے حوالے سے بات کی جائے تو اداکارہ بلاشبہ انڈسٹری میں کوئی ثانی نہیں ہے، روبینہ اشرف نے اپنے اداکاری کیرئیر میں کچھ ایسے مشہور کردار کیے ہیں جنہیں آج بھی ہر کوئی یاد کرتا ہے۔ انہوں نے حال ہی میں ڈائریکشن کی دنیا میں بھی قدم رکھا ہے اور اپنا پہلا ڈرامہ ’’رسوائی‘‘ ڈائریکٹ کیا ہے۔

اداکارہ روبینہ اشرف سے انڈسٹری میں ابھرنے والے نوجوان اور ابھرتے ہوئے ٹیلنٹ کے حوالے سے سوال کیا گیا، تو انہوں نے کہا کہ جب بھی لوگ مجھ سے انڈسٹری میں نوجوانوں اور نئے ٹیلنٹ کے بارے میں میری رائے پوچھتے ہیں تو میں ہمیشہ یہی کہتی ہوں کہ ہم خوش نصیب ہیں۔ وہ ہمارا ایک ایسا اثاثہ ہیں اور بہت اچھا کام کر رہے ہیں۔”

دوسری جانب مینا طارق کو جہاں اپنی والدہ کے ڈرامے روسوائی میں ڈیبیو کرنے کا موقع ملا وہیں انہوں نے والدہ کے وسیع تجربے سے بھی بہت کچھ سیکھا۔ اداکارہ نے کہا کہ ، “آپ کو بہت کچھ سیکھنے کو ملتا ہے اور صحیح اور غلط میں فرق جاننے کو ملتا ہے۔ میں نے اپنی ماں سے سب کچھ سیکھا ہے، لیکن مجھے لگتا ہے کہ ایک چیز جو ان میں نمایاں ہے وہ صبر ہے۔

اس موقع پر روبینہ اشرف کا کہنا تھا کہ آج کے نوجوان اداکار جب کسی مسئلے کا سامنا کرتے ہیں تو کیسے بولتے ہیں۔ “اس نے انہیں ہمیشہ بولنا سکھایا ہے کہ اگر انہیں لگے کہ کچھ غلط ہے تو وہ اس پر کیسے بولیں۔

اداکارہ کے مطابق یہ چیز اب بہت مدد کرتی ہے۔ اگر میں سیٹ پر جاتی ہوں اور مجھے لگتا ہے کہ کچھ ٹھیک نہیں ہے، تو میں جہاں بھی ہو سکتا ہے چیزوں کو درست کرنے کی کوشش کرتی ہوں، کیونکہ جب آپ بولتے ہیں تو آپ چیزوں کو ٹھیک کرتے ہیں۔ جب تک آپ کچھ نہیں کہتے، چیزیں اسی طرح جاری رہیں گی جیسے وہ ہو رہی تھیں۔

مینا طارق نے مزید بتایا کہ شروع میں، وہ کچھ نہیں بولا کرتی تھیں، لیکن میری والدہ نے مجھے کہا کہ جاؤ اور اپنے پروڈیوسروں اور ہدایت کاروں سے بات کرو۔ جب میں نے ایسا کرنا شروع کیا تو چیزیں خود بخود اپنی جگہ پر آنے لگیں۔

تجربہ کار اداکارہ جو حال ہی میں کورونا وائرس کا شکار ہوئی تھیں، انہوں نے موت کی افواہیں پھیلانے پر میڈیا سمیت تمام لوگوں کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

Image Source: Instagram

انٹرویو کے دوران روبینہ اشرف نے اس بات کو بھی اجاگر کیا کہ معیاری سکرپٹ کی کمی نے ٹی وی انڈسٹری کو مایوس کن حالت میں چھوڑ دیا ہے۔ “ٹی وی انڈسٹری میں بہت کچھ ہے جس کی فلحال کمی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم وہ لوگ تھے جنہوں نے ٹیلی ویژن کو ایک ایسے وقت میں بلندی پر رکھا جب ہر کوئی صرف فلمیں بنانے میں دلچسپی رکھتا تھا،‘‘ “ہم نے اشفاق صاحب، بانو آپا اور مستنصر حسین تارڑ کے لکھے ہوئے ڈراموں سے دنیا بھر میں نام کمایا ہے۔

یہی نہیں روبینہ اشرف نے اچھے شوز کی کمی کی نشاندہی بھی کی۔ کہتی ہیں ایک سطح ہونی چاہئے تھی جو ہماری نہیں بن سکی۔ اگرچے اب بھی بہت اچھے ڈرامے بن رہے ہیں، لیکن یہ دس میں سے صرف ایک ہے۔

لیجنڈری اداکارہ نے افسردگی کا اظہار کرتے ہوئے مزید کہا کہ بہت سارے بڑے نام اور اس وقت کی ڈائریکشن جس نے انکاہی اور تنہائیاں جیسے ڈرامے تیار کئے۔ ہم نے جو اتنا بڑا کام کیا، اور آج اس کے مقابلے میں ہم کہیں بھی نہیں ہیں جہاں ہمیں ہونا چاہیے تھا۔

Image Source: The News

جب میزبان احسن خان نے پوچھا کہ “کیا ٹیلی ویژن کی نجکاری پر نفاست کی کمی کا الزام لگایا جا سکتا ہے، تو روبینہ نے جواب دیا،” ایسا ہوتا ہے۔ جب مقدار میں اضافہ ہوتا ہے تو معیار عام طور پر گر جاتا ہے۔ لیکن یہ پہلے پانچ سالوں میں ایک مسئلہ ہونا چاہئے تھا۔ چیزوں کو اب تک رفتار پکڑ لینی چاہیے تھی۔

انہوں نے مزید کہا، “یہ کہنا اچھا نہیں لگتا، کیونکہ ہم بھی کسی نہ کسی طریقے سے اس کے لیے ذمہ دار ہیں۔ اس شعبے سے وابستہ ہر شخص کسی نہ کسی طرح ذمہ دار ہے۔ اور یہ ان کا قصور نہیں ہے۔

ایک اداکار کو دس اسکرپٹس کی پیشکش کی جائے گی اور وہ معیار کے مسائل کی وجہ سے پہلی سطر سے انکار کر دیں گے لیکن وہ دسویں پر طے کر لیں گے کیونکہ ان کے پاس کھانا کھلانے کے لیے ایک خاندان ہے اور روزی کمانے کے لیے۔ لہٰذا، صورتحال قدرے دل دہلا دینے والی ہے۔ ہمیں اپنے اسکرپٹ پر کام کرنے کی ضرورت ہے.

روبینہ اشرف نے ڈرامہ سیریلز میں کرداروں کی نشوونما کے فقدان پر بھی بات کی۔ ’’جب میں آج کل کے ڈرامے دیکھتی ہیں تو انہیں ہیرو نظر آتا ہے، میں جانتی ہوں کہ وہ ہیرو ہے، لیکن مجھے نہیں معلوم کہ وہ ہیرو کیوں ہے۔ کوئی پس منظر نہیں ہے۔ البتہ جب میں نے رسوائی کیا، میں نے اس بات کو یقینی بنایا کہ پیشے آپ کے چہرے پر واضح ہو۔ آپ بتا سکتے ہیں کہ یہ ڈاکٹر ہے یا ایئر ہوسٹس۔ میں نے یونیفارم کو شامل کرنا یقینی بنایا تاکہ لوگ بتا سکیں کہ یہ حقیقی زندگی کے لوگ ہیں۔

جب میزبان نے نوجوان اداکارہ مینا طارق سے پوچھا کہ ان کی تفریحی صنعت میں آنے کی وجہ کیا ہے؟ انہوں نے انکشاف کیا کہ انہیں کبھی بھی اداکاری کو بطور کیریئر بنانے پر مجبور نہیں کیا گیا۔ “وہ ہمیشہ ایک اداکار نہیں بننا چاہتا تھیں. ان کی والدہ نے انہیں اس طرف نہیں دھکیلا ہے۔

وہ کچھ مختلف کرنے کی کوشش کرنا چاہتی تھیں، انہوں نے ہمیشہ اپنی والدہ کو کام پر جاتا دیکھا ہے، میں ان کے کاموں سے متوجہ ہوئی، اس لیے میں نے اسے ایک موقع دینے کا فیصلہ کیا۔ پھر چیزیں بالکل نامیاتی انداز میں بن گئیں اور میں نے اداکاری شروع کر دی۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
1
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format