افسوس۔۔ لڑکیوں کا اکیلے رکشے میں سفر کرنا بھی محال ہوگیا


0

آج کل نوجوان لڑکیاں بسوں کے دھکوں سے بچنے کے لئے عموماً رکشے کا انتخاب کرتی ہیں تاکہ وہ سکون سے سفر کر سکیں۔ لیکن کچھ نوجوان اپنی عادت سے مجبور کسی صورت انہیں سکون سے سفر نہیں کرنے دیتے، وہ ان اکیلی لڑکیوں کو چھیڑتے ہیں ، پیچھا کرتے ہیں بلکہ ہر ممکن طریقے سے ان کو ہراساں کرتے ہیں یہی وجہ ہے کہ سوشل میڈیا پر آئے دن اس طرح کے واقعات رپورٹ ہو رہے ہیں۔

اسی طرح کا ایک واقعہ کراچی کی مصروف شاہراہ پر پیش آیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق زویا بنت خالد نامی صارف نے فیس بک پر ایک ویڈیو پوسٹ کی ہے جس میں انہوں نے دو موٹر سائیکلوں پر سوار تین لڑکوں کی تصاویر اور ویڈیوز شیئر کی ہیں، جنہوں نے انہیں ہراساں کرنے کی ہر ممکن کوشش کی۔ ان کے مطابق شاہراہِ فیصل پر دو موٹر سائیکلوں پر تین لڑکے ان کے رکشے کا پیچھا کرتے رہے اور چھیڑ چھاڑ، آوازیں کسنے کے ساتھ انہیں اشارے بھی کرتے رہے۔

چنانچہ انہوں نے فیصلہ کیا کہ وہ ان لڑکوں کی ویڈیو بنائیں۔ تاہم موبائل سے انہیں ویڈیو بناتے دیکھ کر لڑکوں نے اپنے چہرے چھپانا شروع کر دیئے۔ جب کہ ان میں سے ایک اپنی بائیک رکشے کے بالکل قریب لایا اور بولنے لگا کہ کیا ویڈیو گھر والوں کو دیکھاؤ گی؟ اس کے بعد پھر سے یہی لڑکا رکشے کے قریب آیا اور رکشے پر ہاتھ مار کر چیخنا شروع کر دیا کہ سائیڈ میں روکو رکشا، سائیڈ میں روکو تو رکشا اور یہ بھی بولنے لگا کہ ویڈیو کیوں بنا رہی ہے؟ کیا سمجھ رہی ہے؟ لیکن وہ بہادری کا مظاہرہ کرتے ہوئے ان کی ویڈیو بناتی رہیں۔

زویا بنت خالد نے لکھا کہ ان کا رکشہ ڈرائیور بھی ہوشیار تھا اور وہ لڑکے کے چیخنے کے باوجود نہیں رُکا۔ مگر جب ہم لوگ شاہراہِ فیصل پر قائم ٹریفک پولیس اسٹیشن پہنچے تو ڈرائیور نے وہاں پر رکشہ روک دیا اور اس لڑکے کو آواز دی تو وہ اپنے دوستوں کے ساتھ وہاں سے چلتا بنا۔

اس پوسٹ میں صارف کی جانب سے ان تصاویر اور ویڈیوز کو وائرل کرنے کی اپیل کی گئی تاکہ ایسے واقعات کی روک تھام کی جاسکے۔ ممکنہ طور پر ایسے نوجوان گھر سے پڑھائی کے لئے نکلتے ہیں اور سڑکوں پر مٹر گشتی کرتے ہوئے لڑکیوں کو ہراساں کرتے ہیں اور ان کے والدین اپنے بچوں کی ایسی اوچھی حرکتوں سے بالکل لاعلم ہوتے ہیں۔

گزشتہ دنوں اسی نوعیت کا ایک واقعہ لاہور میں پیش آیا کہ جب ایک لڑکی روڈ پر اسکوٹی چلا رہی تھی تو ایک بائیک پر سوار تین لڑکے اس کا پیچھا کرنے لگے اور ساتھ ہی اس کی تصویریں بھی کھینچیتے رہے۔ اسی دوران گاڑی میں سفر کرنے والے ایک شخص نے ان تینوں لڑکوں کی تصویریں کھینچ کر انہیں بھی اسی طرح ہراساں کیا جس طرح وہ اکیلی لڑکی کو کررہے تھے۔ علاوہ ازیں ، موٹر سائیکل پر سوار ان لڑکوں کی تصویریں فیس بک کے نامور سماجی پیج پر بھی اپلوڈ کردیں گئیں ہیں تاکہ ان لڑکوں کو سبق مل سکے اور وہ آئندہ ایسی حرکت کرنے سے باز رہیں ۔

یاد رہے دو روز قبل بھی سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہوئی تھی، جس میں ایک راہ چلتی خاتون کو پی ایس او پمپ کا ایک ملازم راہ چلتی خاتون کو سڑک پر جنسی طور پر ہراساں کرتا ہے، جس پر خاتون کو شدید غصہ آتا ہے اور وہ ملزم پکڑنے کی کوشش کرتی لیکن وہ بھاگ جاتا ہے بعدازاں کچھ لوگ اسے پکڑتے ہیں اور خاتون بغیر ڈر وخوف کے چپل سے مذکورہ شخص کی درگت بناتی ہیں۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
1
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
1
omg
win win
1
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format