مدرسے کے قاری صاحب نے عوام کے دل جیت لئے، ویڈیو وائرل


0

اس بات سے انکار کسی صورت بھی ممکن نہیں کہ ماں کی گود کے بعد اساتذہ ہی بچوں کی کردار سازی کرتے ہیں اور اس کے لئے یہ ضروری ہے کہ استاد بھی اپنے طالب علم سے ایک ماں کی طرح سلوک کریں۔ اساتذہ چاہے یونیورسٹی کے ہوں یا مدرسہ کے، وہ بچوں کے لیے رول ماڈل ہونے چاہئیں۔ ان کی زبان سے نکلنے والے الفاظ سے زیادہ طاقتور اور موثر ان کا کردار ہونا چاہئیے۔

اسی حوالے سے سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہو رہی ہے جس میں ایک قاری صاحب سبق پڑھتے مدرسے کے بچوں کو ہاتھ کا پنکھا جھل رہے ہیں۔ اس ویڈیو میں مدرسے میں کئی طالبِ علم قرآن پاک کی تلاوت کرتے نظر آرہے ہیں جب کہ قاری صاحب ایک ایک کر کے ہر طالبِ علم کے پاس جاتے ہیں اور پھر اُن پر ہاتھ کے پنکھے سے ہوا جھلتے ہیں۔ سوشل میڈیا پر یہ ویڈیو شیئر کرتے ہوئے کہا گیا کہ ہمارے معاشرے کو اس طرح کے اساتذہ کی بہت ضرورت ہے۔

Image Source: Screengrab

ہمارے معاشرے کی یہ ایک تلخ حقیقت ہے کہ اکثر دینی مدرسوں میں پڑھائی سے بھاگنے والے بچوں کو مار پیٹ ، بدسلوکی اور تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ افسوس ناک پہلو یہ ہے کہ مدرسوں میں بچوں کے زخمی ہونے پر مقدمہ درج کروا کے سزا نہیں دلوائی جاتی۔ اسی طرح اسکولوں میں بھی اساتذہ بچوں کے ساتھ مار پیٹ کرتے ہیں جن کی ویڈیوز گاہے بگاہے سامنے آتی رہتی ہیں۔

Image Source: Screengrab

ایسے حالات میں یہ ویڈیو خوشی کا باعث ہے اسی لئے مذکورہ ویڈیو کے منظر عام پر آنے کے بعد سے سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے قاری کے اس اقدام کو بہت پسند کیا جا رہا ہے اور ویڈیو کو خوب شیئر کیا جا رہا ہے۔ صارفین کا کہنا ہے کہ وہ اس قاری کا یہ انداز دیکھ کر بہت خوش ہوئے ہیں اور اس سے واضح ہے کہ ہمارے معاشرے میں ابھی بھی انسانیت باقی ہے۔

یاد رہے کہ کچھ عرصہ قبل کراچی کے علاقے بن قاسم میں واقع دینی مدرسے میں معلم نے شدید تشدد کرکے کمسن طالب علم کو موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔تفصیلات کے مطابق عید گوٹھ میں واقع دینی مدرسے میں دس سالہ یتیم بچے کو کئی بار داخل کرایا گیا مگر وہ چند دنوں بعد بھاگ کر گھر واپس آ جاتا تھا۔ ایک روز جب اُس نے مدرسے سے بھاگنے کی کوشش کی مگر معلم نے پکڑ کر شدید تشدد کا نشانہ بنایا۔ حالت نازک ہونے پر کمسن طالب علم کو قریبی اسپتال پہنچایا گیا مگر وہ جانبر نہ ہو سکا۔ ورثاء نے معلم کے خلاف مقدمہ درج کرانے سے انکار کرتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ وہ بچے سے تنگ تھے، معلم کو مارپیٹ کرنے کا مکمل اختیار دیا تھا۔ بچے کی موت پر معلم کے خلاف مقدمہ درج نہیں کرایا جائے گا۔ تاہم پولیس حکام نے کہا ہے کہ حکومت کی مدعیت میں مقدمہ درج کرکے کارروائی آگے بڑھائی جائے گی۔

مزید پڑھیں: نجی کالج کی طالبہ کا پرنسپل اور ایڈمنسٹریٹر پر اجتماعی زیادتی کا الزام


خیال رہے  لاہور کے مدرسے جامعہ منظور الاسلام سے منسلک عزیز الرحمان کی ایک متنازعہ ویڈیو سامنے آئی تھی، جس میں دیکھا گیا تھا کہ وہ ایک طالب علم کو اپنی حوس کا نشانہ بنارہے ہیں۔ بعدازاں متاثرہ طالب علم کی جانب سے مفتی عزیز الرحمان کے خلاف پولیس میں درخواست دی تھی۔ جس پر پولیس نے ملزمان کے خلاف فوری مقدمہ درج کرلیا تھا


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
1
love
lol lol
0
lol
omg omg
1
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format