اسلام آباد نازیبا ویڈیو کیس: متاثرین نے ملزم عثمان مرزا کو پہچاننے سے انکار کردیا


0

اسلام آباد میں نوجوان لڑکی اور لڑکے کو ہراساں کرنے کے کیس میں حیران کن موڑ، متاثرہ لڑکی نے منگل کے روز ہونے والی سماعت میں ملزم کے خلاف اپنا بیان واپس لے لیا اور ٹرائل کورٹ کو بتایا کہ وہ اس کیس کی مزید پیروی نہیں کرنا چاہتی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ برس جولائی میں سوشل میڈیا پر ایک ہولناک ویڈیو وائرل ہوئی تھی، جس میں دیکھا گیا تھا کہ ایک مشتبہ شخص اپنے ساتھیوں کے ہمراہ نوجوان لڑکے اور لڑکی پر بہیمانہ انداز میں تشدد کا نشانہ بنا رہا اور انہیں کپڑے اتارنے اور جنسی تعلق قائم کرنے پر مجبور کر رہا ہے۔

usman mirza
Image Source: Twitter

بعدازاں پولیس نے کاروائی کرتے ہوئے تمام ملزمان کو حراست میں لیکر مقدمہ درج کرلیا تھا، جبکہ ستمبر میں مرکزی ملزم عثمان مرزا اور شریک ملزمان حافظ عطاء الرحمان، اداس قیوم بٹ، ریحان، عمر بلال مروت، محب بنگش اور فرحان شاہین کے خلاف عدالت نے فرد جرم عائد کردی تھی۔

اس سلسلے میں گزشتہ روز (منگل) کو ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج عطا ربانی نے منگل کو کیس کی سماعت کی صدارت کی جہاں مرزا اور دیگر کو بھی عدالت میں پیش کیا گیا۔

جج نے حکام کو ہدایت کی کہ ملزمان کو حاضری لگانے کے بعد بخشی خانہ منتقل کیا جائے۔ یہ ایک عارضی لاک اپ ہے جو ضلعی عدالتوں میں واقع ہوتا ہے۔

Image Source: File

اس دوران شکایت کنندہ جوڑا ابتدائی طور پر سماعت کے لیے موجود نہیں تھا لیکن بعد میں اپنے وکیل حسن جاوید شورش کے ساتھ پیش ہوا۔ انہوں نے اس سے قبل اڈیالہ جیل میں ہونے والی شناختی پریڈ میں تین ملزمان کی شناخت کی تھی۔

تاہم سماعت کے دوران ملزم کے وکلا نے جب لڑکی سے جرح کی، تو متاثرہ لڑکی نے جج کو بتایا کہ وہ اڈیالہ جیل نہیں گئی اور نہ ہی شناختی پریڈ میں حصہ لیا تھا۔

متاثرہ خاتون کا کہنا تھا کہ پولیس نے متعدد بار اس سے ملاقات کی اور کاغذ کے خالی ٹکڑوں پر اس کے دستخط اور انگوٹھے کا نشان مانگا تھا۔ انہوں نے کہا کہ میں کسی بھی ملزم کو نہیں جانتی اور نہ ہی اس کیس کی پیروی کرنا چاہتی ہوں۔

متاثرہ لڑکی نے عدالت کو یہ بھی بتایا کہ اس نے کسی کو تاوان ادا نہیں کیا۔ اور نہ ہی کسی بھی ملزم نے اس کے ساتھ جنسی زیادتی کی کوشش کی تھی۔

Image Source: File

سنگنگ نے ایک ملزم ریحان کو بتایا، اس نے کہا کہ وہ اسے نہیں جانتی اور اس نے ویڈیو نہیں بنائی۔ اس نے کہا کہ پولیس نے سارا معاملہ ’’تشکیل‘‘ کر لیا ہے۔ عدالت میں اسٹامپ پیپر جمع کرانے کے بعد، اس نے کہا کہ اس نے اسے کسی “دباؤ” کے تحت جمع نہیں کیا ہے۔

متاثرہ لڑکی بیان دیا کہ میں نے کسی ملزم کی شناخت نہیں کی اور نہ ہی کسی کاغذات پر دستخط کیے،” وہ اس کیس میں گرفتار ملزمان میں سے کسی نے بھی اس کے ساتھ زبردستی نہیں کی، نہ کوئی ویڈیو بنائی اور زبردستی انہیں برہنہ کیا تھا۔

خاتون نے کہا کہ اس نے پولیس یا جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے کسی گرفتار مشتبہ شخص کی شناخت نہیں کی، وہ کسی بھی گرفتار یا مقدمے میں نامزد افراد کے خلاف کسی قسم کی کارروائی نہیں کرنا چاہتی ہیں۔

آخر میں لڑکی نے کہا کہ وہ یہ حلف نامہ اپنی مرضی سے اور کسی دباؤ کے بغیر جمع کروا رہی ہے۔ اس نے عدالت کو یہ بھی بتایا کہ وہ اس کیس کی بعد کی سماعتوں کے لیے حاضر نہیں ہونا چاہتی۔ تاہم جج نے انہیں بتایا کہ انہیں پیش ہونا پڑے گا اور سماعت 18 جنوری تک ملتوی کر دی۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
1
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format