ملتان میں بچے کے اغواء کے الزام میں اسٹیج اداکارہ آئمہ خان گرفتار


0

پولیس نے بدھ کے روز ایک بڑی کارروائی کرتے ہوئے مقامی اسٹیج اداکارہ، ان کے شوہر اور ان کے بہنوئی کو دہلی گیٹ، ملتان سے ایک کمسن بچے کو اغوا کرنے کے الزام میں گرفتار کر لیا۔

پولیس کے مطابق ڈھائی سالہ نقیب اللہ ولد میاں گل ملتان کے علاقے فاروق ٹاؤن دہلی گیٹ کی کڑی جمنداں گلی سے لاپتہ ہوا تھا۔

Image Source: File

پولیس نے بتایا کہ میاں گل نامی شخص نے ابتداء میں اپنے بیٹے کو خود تلاش کیا، لیکن ناکامی پر پھر پولیس سے رجوع کیا۔ پولیس کو دی گئی شکایت میں گل میاں نے کہا کہ اس کا کمسن بیٹا قریبی دکان پر گیا تھا۔ اس دوران دو نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے اسے اغوا کرلیا۔ چنانچہ متاثرین کی شکایت پر دہلی گیٹ پولیس نے دونوں نامعلوم اغوا کاروں کے خلاف اغوا کا مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی۔

اس موقع پر ملتان سٹی پولیس آفیسر (سی پی او) خرم شہزاد حیدر نے واقعے کا نوٹس لے لیا۔ انہوں نے ملزمان کا سراغ لگانے اور لڑکے کی بازیابی کے لیے 12 رکنی پولیس ٹیم تشکیل دی۔ پولیس ٹیم نے علاقے میں کلوز سرکٹ ٹی وی (سی سی ٹی وی) کیمروں کی فوٹیج اکٹھی کی۔

کیس کی مکمل تفتیش کے بعد پولیس اس نتیجے پر پہنچی کہ اسٹیج اداکارہ آئمہ خان، اس کے شوہر مدثر اور بہنوئی مظفر کمر عمر بچے کو اغوا کرنے میں ملوث تھی۔

Image Source: Facebook

بعدازاں پولیس نے کاروائی کرتے ہوئے آئمہ خان کے گھر پر چھاپہ مار کر بچے کو بازیاب کرالیا اور تینوں ملزمان کو گرفتار کرلیا۔ پولیس کی جانب سے بدھ کے روز سی پی او کے دفتر میں منعقدہ ایک تقریب میں بچے کو اس کے والدین کے حوالے کر دیا۔

تفتیش کے نتائج کی وضاحت کرتے ہوئے، ایک پولیس ذرائع نے بتایا کہ اسٹیج اداکارہ نے چار سال قبل رینالہ خورد کے رہائشی سے اس سے شادی کی تھی تاہم وہ بے اولاد تھی۔

ڈاکٹروں نے اسے بتایا کہ وہ حاملہ نہیں ہو سکتی۔ ذرائع نے مزید کہا کہ اداکارہ اتنی بے چین تھی کہ اس نے اپنی بھابھی کو 500,000 روپے دیے اور اس سے کہا کہ وہ کسی بھی طرح سے اپنا بچہ گود دے دیں۔

Image Source: Medium

لہذا آئمہ خان کی اس ضد پر مجبور ہو کر اس کے شوہر اور بہنوئی نے دہلی گیٹ کے علاقے سے کم عمر لڑکے کو اغوا کرلیا۔ اسے اس کے حوالے کر دیا۔

مزید جانئے: مانسہرہ: خواتین کے ساتھ زیادتی کرکے ویڈیو بنانے والے 3 ملزمان گرفتار

دوسری جانب پولیس کی پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ ملزمان نے بچے کو تاوان کے لیے اغوا کیا تھا۔ سی پی او کا کہنا ہے کہ ملزمان سے پوچھ گچھ کی جا رہی ہے اور انہیں جلد عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

اس سلسلے میں سی پی او نے کہا کہ “یہ ایک اندھا کیس تھا اور پولیس ٹیموں نے مشتبہ افراد کو گرفتار کرنے اور بچے کو بازیاب کرنے کے لیے علاقے میں 40 سے زائد گھروں کی تلاشی لی تھی،” جس پر سی پی او نے اغوا کے 30 گھنٹے کے اندر بچے کو بازیاب کروانے پر پولیس ٹیم کے لیے نقد انعامات اور تعریفی اسناد کا اعلان کیا ہے۔

واضح رہے ملک میں کم سن بچوں کو اغواء کے بعد جنسی زیادتی کے کیسسز میں پچھلے کچھ عرصے میں سخت سے سخت قوانین کے باوجود اضافہ دیکھنے میں آیا، گزشتہ برس صوبہ خیبرپختونخوا کے علاقے کوہاٹ میں ایک چار سالہ معصوم بچی کو اغواء اور زیادتی کے بعد بے دردی سے قتل کردیا گیا ہے۔ بعدازاں پولیس نے کاروائی کرتے ہوئے ملزم کو گرفتار کرلیا تھا۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format