لاہور دنیا کے آلوده ترین شہروں میں فہرست میں دوسرے نمبر پر آگیا


0

صوبائی دارالحکومت لاہور کو پیر کو دنیا کا آلودہ ترین شہر قرار دیا گیا، اس سلسلے میں شہر نے اپنے روایتی حریف نئی دہلی کو بہت پیچھے چھوڑ دیا۔

پیر کو لاہور میں ایئر کوالٹی انڈیکس (اے کیو آئی) 289 تک ریکارڈ کیا گیا۔ محکمہ ماحولیات کے ایک افسر کا دعویٰ ہے کہ ’’جس چیز نے معاملہ خطرناک بنا دیا وہ یہ ہے کہ پیر کو شہر میں سموگ نہیں تھی، بلکہ یہ خالص آلودگی تھی۔‘‘

Image Source: File

سموگ اس وقت ہوتی ہے جب دھواں دھند کے ساتھ مل جاتا ہے۔ پیر کو شہر میں نمی کی سطح 60 فیصد تھی – اور اس طرح کی سطح دھند نہیں بنتی۔ پیر کی دھند نے آنکھوں میں کوئی جلن پیدا نہیں کی، جس سے یہ بھی ثابت ہوتا ہے کہ یہ سموگ نہیں تھی۔ اس کا مطلب ہے کہ یہ کہرا خالص آلودگی تھی۔

یہاں بات انتہائی تشویشناک ہے کہ سموگ اس وقت ہوتی ہے جب دھواں دھند کے ساتھ مل جاتا ہے۔ پیر کو شہر میں نمی کی سطح 60 فیصد تھی – اور اس طرح کی سطح دھند نہیں بنتی۔ پیر کی دھند سے آنکھوں میں کوئی جلن نہیں ہوئی، جس سے یہ بھی ثابت ہوتی ہے کہ یہ سموگ نہیں تھی۔ اس کا مطلب ہے کہ یہ کہرا خالص آلودگی تھی۔

“دوسری جانب اور جو چیز اور بھی زیادہ تشویشناک ہے، وہ یہ ہے کہ یہ خالصتاً مقامی ہے،‘‘ افسر نے مزید کہا کہ “ملک میں اب بھی مغربی ہوائیں چل رہی ہیں، جس کا مطلب ہے کہ ہوا بھارت کی طرف چل رہی ہے، اور سرحد کے اس طرف سے آلودگی نے ابھی تک پاکستان پر حملہ نہیں کیا ہے۔

Image Source: File

ایک بار جب ہوا اپنا رخ بدلتی ہے اور بھارت سے آنے والی آلودگی (بنیادی طور پر جللنے سے نکلنے والا دھواں) پاکستان لے جاتی ہے تو یقیناً یہاں کی صورتحال مزید خراب ہو جائے گی۔

اس حوالے سے محمکہ ماحولیات نے مزید بتایا کہ محکمہ صورتحال پر قابو پانے کے لیے سوائے آلودگی کے “ہاٹ سپاٹ” سے نمٹنے کے بہت کم ہی کچھ کر سکتا ہے، صنعتی علاقے اور ان کے کام زیر نگرانی ہیں۔

انہوں نے مزید بتایا کہ محکمے نے پہلے ہی اپنی فیلڈ فورس کو صنعتی کاموں پر توجہ دینے کی ہدایت کر رکھی ہے، خاص طور پر رات کے وقت، کیونکہ عام طور پر، صنعت، خاص طور پر لاہور کے شمالی علاقوں میں قائم فیکٹریاں رات کے وقت غیر معیاری اور انتہائی آلودگی پھیلانے والے ایندھن کا استعمال کرتی ہیں۔

Image Source: AFP

دوسری جانب محکمہ موسمیات کی پیش گوئی بھی فلحال کوئی ریلیف فراہم نہیں کررہی ہے۔ اگلے 48 گھنٹوں کے لیے خشک موسم کی پیش گوئی ہے اور اگلے چند دنوں کے دوران کوئی بارش کی امید نہیں ہے۔

واضح رہے پیر کو ہوا کی رفتار، جو عام طور پر آلودگی کو دور کرتی ہے، صرف پانچ ناٹ تک تھی۔ اس نے لاہور کی فضاؤں میں آلودگیوں کو معلق کر دیا۔ محکمہ موسمیات کے افسر نے بتایا کہ اگلے 24 گھنٹوں تک درجہ حرارت اور دھند ایک جیسی رہے گی۔

اس سلسلے میں پلمونولوجسٹ ڈاکٹر ندیم احمد لوگوں کو گھر سے باہر نکلتے وقت ماسک پہننے کا مشورہ دیتے ہیں۔ یہاں تک کہ گھروں کو بھی اب ہوا صاف کرنے والوں کی ضرورت ہے کیونکہ باریک ذرات پھیپھڑوں اور یہاں تک کہ خون پر حملہ کر سکتے ہیں، کمرے پر بھی آسکتے ہیں، لہذا انہوں نے خبردار کیا کہ پہلے سے متاثر افراد (جیسے دمہ) والے لوگوں کو باہر جانے سے گریز کریں، انہیں اس آلودگی سے اپنے آپ کو زیادہ سے زیادہ بچانے کی ضرورت ہے۔

یاد رہے پنجاب یونیورسٹی نے گزشتہ ماہ شہر کے مختلف مقامات پر فضائی آلودگی کی وجوہات کی پیمائش کے لیے 10 گیجٹس نصب کیے تھے۔ اس کے نتائج کا استعمال عوام، حکومت اور قانون سازوں کو آلودگی کے صحت کے خطرات کو کنٹرول کرنے اور آلودگی پر قابو پانے کے لیے کیا جائے گا۔

Story Courtesy: Dawn


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
1
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format