اسلام آباد میں بولڈ فوٹو شوٹ کرانے والے جوڑے کے خلاف مقدمہ درج


0

اسلام آباد پولیس کی جانب سے مسٹیکل شایری نامی بینڈ کے ممبران کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔ بینڈ ممبران نے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد ایکسپریس ہائی وے کے قریب واقع قائد اعظم محمد علی جناح کے پورٹریٹ کے سامنے “فحش” فوٹو شوٹ کیا تھا۔

کورال پولیس نے راشد ملک نامی شہری کی شکایت پر مقدمہ درج کیا ہے۔ شکایت کنندہ نے درخواست میں موقف اپنایا کہ ، کورال چوک پر قائم قائداعظم کے پورٹریٹ کے سامنے لڑکی اور لڑکے کی آدھی برہنہ تصویریں بابائے قوم کی بے عزتی کے مترادف ہیں۔

شکایت کندہ کا مزید کہنا تھا کہ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی مذکورہ تصویروں کے خلاف بیشتر لوگ قانونی کارروائی چاہتے ہیں۔ اسی دوران پولیس کی جانب سے مشتبہ لڑکے اور لڑکی کے خلاف کارروائی جاری ہے، پولیس فوٹو شوٹ کرانے والے دونوں ملزمان کو تلاش کررہی ہے، جن کی وجہ سے پوری قوم کے جذبات مجروح ہوئے ہیں۔

واضح رہے دو روز قبل سینیئر صحافی انصار عباسی نے سوشل میڈیا پر نوجوان جوڑے کے خلاف عوامی سطح پر فحاشی پھیلانے کے خلاف آواز بلند کرتے ہوئے کاروائی کی درخواست کی تھی۔ جس کے بعد سوشل میڈیا جہاں وہ دونوں نوجوان بحث اور توجہ کا مرکز بنے ہوئے ہیں وہیں انصار عباسی کو بھی لیکر کافی مباحثے ہوئے۔ کچھ لوگوں نے حمایت کی، تو کچھ نے کا خیال تھا کہ شاید انہیں اس وقت کوئی جانتا بھی نہ ہوگا لیکن سینئر صحافی کی مہم کے بعد دونوں لوگ مشہوری حاصل کرگئے ہیں۔

Image Source: Twitter
Image Source: Twitter

اس ہی سلسلے میں سینئیر صحافی انصار عباسی نے ڈپٹی کمشنر اسلام آباد حمزہ شفقت کو مخاطب کرتے ہوئے درخواست کی تھی کہ دارالحکومت اسلام آباد میں عوامی مقامات پر فحاشی پھیلانے پر مذکورہ جوڑے کو گرفتار کیا جائے۔ جس پر ردعمل کے طور پر ڈی سی اسلام آباد نے عوام سے درخواست کی تھی کہ مزکورہ جوڑے کے حوالے سے اگر کوئی معلومات ہے، تو سامنے آئیں۔

بعدازاں انصار عباسی اور ڈی سی اسلام آباد حمزہ شفقت کی جانب سے کچھ لوگوں نے اس کاوش کو سراہا تھا، تو کچھ لوگوں نے دونوں کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا تھا، لوگوں کا ماننا تھا کہ وہ اپنا ذمہ داریوں پر توجہ مرکوز کریں، اخلاقی اقدار پر عمل درآمد ان کی ذمہ داری نہیں ہے۔

سوشل میڈیا پر شدید تنقید کا سامنا کرنے پر انصار عباسی کی جانب سے ٹوئیٹر پر ایک اور پیغام جاری کیا گیا، جس میں انہوں نے لکھا کہ، ڈئیر ڈپٹی کمشنر ، میں آپ کے اس عمل کی تعریف کرتا ہوں، برائے مہربانی عریانی اور فحاشی کے محافظوں کی تنقید کے حوالے سے پریشان نہ ہوں۔ ملک کے قانون کے مطابق آپ کو ان لوگوں کو روکنے کے لئے کام کرنا چاہئے، جو عوام میں فحاشی پھیلا رہے ہیں۔

خیال رہے رہے انصار عباسی کی جانب سے کچھ عرصہ قبل نیشنل ٹی وی پر ایک خاتون کے ورزش کرنے کے خلاف بھی آواز بلند کی گئی تھی۔ انہوں نے وزیراعظم عمران خان سے درخواست کی تھی کہ وہ اس معاملے پر سخت ایکشن لیں اور ذمہ داران کے خلاف کاروائی کریں۔

یاد رہے اس سے قبل انصار عباسی نے اداکار مہوش حیات کے بکسٹ اشتہار کو لیکر بھی سخت موقف اپنایا گیا، انہوں کہا تھا کہ بسکٹ بیچنے کے لئے اب ٹی وی پر مجرا چلے گا۔ پیمراہ نام کا کوئی ادارہ ہے یہاں؟ کیا وزیراعظم پاکستان عمران خان اس معاملے پر کوئی ایکشن لیں گے؟ کیا پاکستان اسلام کے نام پر نہیں بنا تھا۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format