آنکھوں پر ڈیجیٹل دباو


-1
-1 points

موجودہ دورمیں لوگ اپنا کافی سارا وقت اسمارٹ فونز، ٹیبلیٹس اور لیپ ٹوپ کی اسکرینز دیکھتے ہوئے گزارتے ہیں۔

تیز رفتار ترقی کا موجودہ دور ٹی وی اسکرین سے نکل کر اسمارٹ فون اسکرین تک جا پہنچا ہے آج کے دور میں صرف تفریحی ہی نہیں بلکہ دفتری اور کاروباری امور کے لیے کمپیوٹر، اسمارٹ فون اور اس سے ملتی جلتی ڈیجیٹل ڈیوائسز ہماری زندگی کا لازمی حصہ بن چکی ہیں۔ ڈیجیٹل آنکھ کا تناؤ صرف کمپیوٹر یا اسمارٹ فون کے استعمال تک ہی محدود نہیں بلکہ ویڈیو گیمز کھیلنا بھی آنکھوں کے لیے دباؤ کا باعث ہوتا ہے۔ ہر وقت اس کے جڑے رہنے سے آنکھوں پر ڈیجیٹل دباؤ بڑھتا ہے جس سے آنکھوں سے متعلق مسائل پیدا ہو رہے ہیں۔

Ankhon Pa Digital Dabao
Image Source:All About vision

طبی ماہرین کے مطابق اسمارٹ فونز، کمپیوٹرز اور دیگر ڈیوائسز کو استعمال کرنے کے لیے ہماری آنکھوں کو خصوصی صلاحیتوں کی ضرورت ہوتی ہے، جیسے آنکھوں کی حرکت، ایک سے دوسری پوزیشن میں منتقلی، توجہ مرکوز کرنا ۔

اسمارٹ فون، ٹیبلیٹ اور لیپ ٹاپ کی اسکرینوں سے خارج ہونے والی نیلی روشنی حیران کن حد تک طاقتور ہوتی ہے جس کا آپ نے تصور بھی نہیں کیا ہوگا۔

آنکھوں کی تھکن کیلئے ناقابلِ یقین حل دریافت کریں:مزید پڑھیے
یہ روشنی ان ڈیوائسز کی اسکرینوں کو اتنا روشن کردیتی ہے کہ ہم انہیں دن کی روشنی میں بھی دیکھ سکتے ہیں اور رات کے وقت وہ اتنی روشن ہوتی ہیں کہ آپ اس کا موازنہ دن کی روشنی سے بھی کسی حد تک کرسکتے ہیں۔

Ankhon Pa Digital Dabao
Image Source:Eye clinic

ایک تحقیق میں بتایا گیا ہےکہ اسمارٹ فونز سے خارج ہونے والی یہ روشنی آنکھوں میں جذب ہوکر ایسے زہریلے کیمیکل کی پیداوار کو حرکت میں لاتی ہے جس سے خلیات کو نقصان پہنچتا ہے۔
اس نقصان کے نتیجے میں بینائی میں بڑے بلائنڈ اسپاٹس بنتے ہیں جو پٹھوں میں تنزلی کی علامت ہوتے ہیں، یہ ایک ایسا مرض ہے جس سے اندھے پن کا خطرہ بڑھتا ہے۔

Ankhon Pa Digital Dabao

کمپیوٹر اور ڈیجیٹل ڈیوائسز کے استعمال کی وجہ سے اکثر لوگوں کی آنکھوں پر دباؤ رہتا ہے جس کی وجہ سے انہیں آنکھوں میں تھکن اورسر درد کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ سر درد اور تناؤ کی یہ کیفیت ا سکرین سے دور ہونے کے بعد بھی کافی وقت تک برقرار رہتی ہے بلکہ بعض لوگوں کو  سوتے وقت بھی سر درد کی لاحق ہوتا  ہے۔

اس حوالے سے ماہرین کا کہنا ہے کہ انسانی بصارت کی انتہائی حد تقریباً 20 فٹ ہوتی ہے، یعنی مذکورہ فاصلے سے روشنی کا عکس آنکھوں میں متوازی طور پر داخل ہوتا ہے یعنی جب روشنی کا عکس یا شعاعیں ریٹینا پر پڑتی ہیں تو بینائی واضح ہوتی ہے جو مقررہ فاصلے پر منحصر ہوتا ہے۔ اس لیے جب قریب سے کمپیوٹر اسکرین کو دیکھتے ہیں تو آنکھ کے پٹھے سکڑ جاتے ہیں اور آنکھ کا لینز یعنی محدب عدسہ منحنی ہو جاتا ہے جس سے بصارت واضح ہوتی ہے۔

مگر اچھی بات یہ ہے کہ ماہرین کا کہنا ہے کہ پورا دن اسکرین کے سامنے رہنے سے ہونے والے نقصان سے بچا جا سکتا ہے اور اس کے لئے چارحکمت عملی کو اپنا کر فائدہ حاصل کیاجا سکتا ہے۔

آنکھوں کو کیسے محفوظ رکھا جائے؟

دن بھر میں کئی گھنٹے اسکرین کے سامنے گزارنے سے بینائی کو مستقل نقصان پہنچتا ہے یا نہیں، اس سے قطع نظر چند آسان عادات سے آنکھوں کو تحفظ فراہم کرنا ممکن ہے۔

20-20-20

ایک غیر ملکی میگزین نے رپورٹ شائع کی ہے جس میں آنکھوں کو ڈیجیٹل دباؤ سے محفوظ رکھنے کے لیے ایک طریقہ بیان کیا گیا ہے جس کو 20-20-20 کا نام دیا گیا ہے۔

Ankhon Pa Digital Dabao
Image Source:ARY NEWS

جدید تحقیق کے مطابق آنکھوں پر دباؤ کم کرنے کے لیے 20 فٹ یا 6 میٹر یا اس سے زیادہ دور کسی چیز کو 20 سیکنڈ تک دیکھنا ہوتا ہے۔ یہ عمل اسکرین کے سامنے رہتے ہوئے ہر 20 منٹ بعد دہرانا ہوتا ہے اسی لیے اسے 20-20-20 کا طریقہ کہا جاتا ہے۔

اگر آپ کمپیوٹر یا موبائل فون اسکرین پر ہیں تو ہر 20 منٹ بعد اپنی آنکھوں کو آرام دیں اور نظریں 20 سیکنڈ کے لیے اسکرین سے ہٹاکر  اپنے اردگردیکھیں جس سے آنکھوں کے پٹھوں سکون ملے گا۔ اگر یہ مشکل ہو تو اس ٹائم کو بڑھایا بھی  جا سکتا ہے مگر وقفہ کرنا آنکھ کی صحت اور دباؤ کو کم کرنے کےلئے بہت فائدہ مند ایکسر سائزہے۔

پلکیں جھپکانا

Ankhon Pa Digital Dabao
Image Source:ALL about Vision

پلکیں جھپکانا جب ہم اسکرینوں کو گھورتے ہیں تو پلک جھپکانا بھول جاتے ہیں جس سے آنکھیں خشک ہوجاتی یہ یاد رکھنا اگرچہ مشکل ہوسکتا ہے مگر پلک جھپکانے کو یقینی بنانے کی کوشش کرنا کافی مددگار ثابت ہوتا ہے۔ہیں۔

فونٹ بڑا کرلیں

ڈیوائسز میں فونٹ کے سائز کو بڑا کرنا ممکن ہوتا ہے جس سے مواد کو دیکھنے کے دوران آنکھوں پر دباؤ زیادہ نہیں بڑھتا۔

اسکرین پر چھوٹے ٹیسکٹ کو گھورنا آنکھیں سکیڑنے پر مجبور کردیتا ہے اور آپ اپنا چہرہ بھی اسکرین کے نزدیک لے جاتے ہیں جس سے سر درد اور تھکاوٹ کے علاوہ دوسرے مسائل کے خطرہ میں اضافہ ہوتا ہے۔فونٹ کا سائز اور رنگوں کی تبدیلی سے اس مسئلے کو حل کیا جا سکتا ہے۔

سونے سے ایک یا دو گھنٹے پہلے اسکرین کا استعمال ترک کر دینا

یہ اصول نہ صرف آنکھوں کے لیے مفید ثابت ہوتا ہے بلکہ اس سے تناؤ میں کمی آتی ہے جبکہ نیند کا معیار بھی بہتر ہوتا ہے۔۔۔

فون اور آنکھوں کے درمیان مناسب فاصلہ

اپنے فون کو چہرے سے اتنی دور رکھیں جتنی دور آپ کسی کتاب کو پڑھتے ہوئے رکھتے ہیں، اس سے آنکھوں کو بہت زیادہ توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت نہیں رہتی۔

Ankhon Pa Digital Dabao
Image Source:Eye strain

امریکن اکیڈمی برائے امرض چشم کے ماہرین کا کہنا ہے کہ کمپیوٹر اسکرین کو آنکھ سے کم از کم 64 سینٹی میٹرکے فاصلے پر رکھا جائے جو تقریباً ایک انسانی بازو کے برابر ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ اسکرین آنکھوں کے لیول سے زیادہ بلند نہ ہو۔

اسکرین  کی برائٹنس تبدیل کرنا

اسکرین کی برائٹ نیس آنکھوں کی چمک ،آنکھوں پر دباﺅ اور سردرد کا باعث بنتی ہے۔ اپنی اسکرین کی برائٹنس کو ایڈجسٹ کرکے آپ اسکرین پر ریفلیکشن کو روک سکتے ہیں یا اس حوالے سے کچھ ایپس بھی دستیاب ہیں۔

سب سے اہم بات یہ ہےکہ آنکھوں کا باقاعدگی سے معائنہ کراتے رہیں تاکہ کسی بھی خرابی کی صورت میں فوری طورپر اس کا علاج ممکن ہو سکے۔


Like it? Share with your friends!

-1
-1 points

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
1
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
1
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
2
win
Annie Shirazi

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format