نور مقدم قتل کیس میں ملزم ظاہر جعفر کو دماغی مریض ثابت کرنے کوشش


0

نور مقدم قتل کیس کے مرکزی ملزم ظاہر جعفر نے بدھ کو عدالت سے استدعا کی کہ وہ “ذہنی طور پر بیمار” ہے۔ اس سلسلے میں ملزم کی قانونی ٹیم نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کرتے ہوئے استدعا کی تھی کہ مرکزی ملزم کی ذہنی صحت کا جائزہ لینے کے لیے میڈیکل بورڈ تشکیل دیا جائے۔

ظاہر جعفر کو گزشتہ ماہ اسلام آباد کی ایک سیشن عدالت سے اس وقت نکال دیا گیا تھا جب اس نے مقدمے کی سماعت میں ’خلل‘ پیدا کرنے کی کوشش کی تھی، جس میں گواہوں سے جرح کی جا رہی تھی۔ پولیس افسران کو جج کے ساتھ نازیبا زبان استعمال کرنے اور سماعت کے دوران بدتمیزی کرنے پر ملزم ظاہر جعفر کو کمرہ عدالت کی عمارت سے باہر لے جانا پڑا تھا۔

Image Source: File

اسلام آباد پولیس نے ظاہر جعفر کے خلاف کمرہ عدالت کے اندر “نازیبا الفاظ” استعمال کرنے اور عدالت کے احاطے میں خودکشی کی کوشش کرنے پر فوجداری مقدمہ بھی درج کیا تھا۔

بدھ کی درخواست میں، جعفر کے وکیل نے کہا کہ ملزم منشیات کی نفسیات کی وجہ سے ذہنی عارضے شیزو افیکٹو کے عارضے کا دائمی مریض تھا اور 20 جولائی 2021 کو گرفتاری کے وقت بھی یہی موقف تھا۔

جس پر ٹیم نے عدالت سے کہا کہ وہ “انصاف کے مفاد میں ملزم ظاہر جعفر کی پاگل پن/ذہنی صحت کا تعین کرنے کے لیے” میڈیکل بورڈ کے قیام کی اجازت دے۔

Image Source: Twitter

درخواست میں کہا گیا کہ “مقامی پولیس اور انویسٹی گیشن ایجنسی نے شکایت کنندہ کے اثر و رسوخ کی وجہ سے ملزم ظاہر جعفر کی ذہنی صحت کی صورتحال کو ریکارڈ اور عدالتوں میں ظاہر کرنے میں ناکام رہی یا اپنی مرضی سے گریز کرتی رہی کیونکہ شکایت کنندہ ایک سفیر ہے اور ان کے طاقتور حلقوں میں میں اچھے رابطے ہیں۔”

واضح رہے جنوبی کوریا اور قازقستان میں پاکستان کے سابق سفیر شوکت مقدم کی بیٹی 27 سالہ نور مقدم کو 20 جولائی کو اسلام آباد میں ایک رہائش گاہ سے سر تن سے جدا کرکے قتل کر دیا گیا تھا۔ مرکزی ملزم جعفر کو قتل کے دن جائے وقوعہ سے گرفتار کیا گیا تھا۔ تب سے ملزم زیر حراست ہے۔

Image Source: File

اکتوبر میں اپنی فرد جرم کی سماعت کے دوران ملزم ظاہر جعفر نے اعتراف کیا کہ اس نے “جرم” کا ارتکاب کیا ہے لیکن جج سے اپیل کی کہ وہ اسے جیل سے رہا کریں اور اسے گھر میں نظر بند کر دیں۔ “اسے شادی کرنی چاہیے، اس کے بچے ہوں۔

خیال رہے اکتوبر میں شروع ہونے والا قتل کا مقدمہ پاکستان کی حالیہ تاریخ کا سب سے ہائی پروفائل مقدمہ قرار دیا جا رہا ہے، کیونکہ اس کیس نے خواتین کے خلاف کسی بھی حالیہ جرم کے برعکس سب سے زیادہ عوامی غم و غصے کو جنم دیا ہے اور میڈیا کی توجہ حاصل کی ہے۔

یاد رہے گزشتہ ماہ استغاثہ کی جانب سے عدالت میں سی سی ٹی وی فوٹیج کی ریکارڈنگ جمع کرائی تھی، جس میں قتل سے قبل پیش آنے والے واقعات اور مناظر صاف دیکھے گئے تھے۔ متاثرہ لڑکی نے مرکزی ملزم کے گھر کی پہلی منزل سے چھلانگ لگا کر بھاگنے کی کوشش کی تھی لیکن عملے نے اسے احاطے سے باہر جانے سے روک دیا تھا۔

نور مقدم قتل کے مقدمے میں مرکزی ملزم کی علاوہ ملزم کے والدین ذاکر جعفر اور عصمت آدم جی، تین ملازمین اور نو تھراپی ورک ملازمین بھی نامزد ہیں۔


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
1
omg
win win
1
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format