تپتے صحرا میں ریت سے علاج،صحتیابی کیلئے مریض اس ریت میں خود کو زندہ دفنا لیتے


0

ہمارے ملک میں درگاہوں اور مزاروں پر منتیں مانگنا صدیوں پرانی روایت ہے مگر کیا آپ اس بات پر یقین کرینگے کہ جدت کے اس دور میں لوگ ریت میں اپنے مرض کی شفا تلاش کررہے ہیں؟ بلکہ لوگوں کا یہ ماننا ہے کہ یہ ایک قسم کی روحانی تھیراپی ہے۔ ایسا حقیقت میں ہورہا ہے اور اس کا عملی نمونہ آپ مظفرگڑھ کے دربار پیر محب جہانیاں میں دیکھ سکتے ہیں جہاں دور دور سے لوگ ریت سے اپنا علاج کرانے آتے ہیں۔

Image Source: Screengrab

یہ جگہ کہاں واقع ہے؟

Image Source: Screengrab

مظفر گڑھ شہر سے 40 کلو میٹر دور شاہ جمال روڈ پر ریت کے اونچے ٹیلوں کے درمیان واقع پیر محب جہانیاں کی درگاہ سے متصل اس قبرستان میں ہر طرف ریت ہی ریت ہے ماسوائے ایک درخت کہ جس کا نام ‘جھل’ ہے اور اس درخت کو ’مقدس‘ خیال کیا جاتا ہے۔ اس درگاہ کے گرد ونواح میں رہنے والوں کا یہ ماننا ہے کہ اگر کسی کو گردوں ، پھیپھڑوں ، جوڑوں حتیٰ کہ کینسر بھی ہے تو اس درخت کے نیچے گردن تک اپنے آپ کو ریت میں اس یقین کے ساتھ ’دفنا’ لے کہ اس کو لاحق لاعلاج مرض دور ہوجائے گا اور بالخصوص اس معجزاتی ریت میں دفنانے کی بدولت وہ دوبارہ صحت یاب ہوجائے گا تو ایسا واقعی ہوگا۔

طریقہ علاج کیا ہے؟

Image Source: Screengrab

اس طریقہ علاج کے بارے میں درگاہ کے پیروکاروں کا کہنا ہے کہ یہاں آنے والے مریض کو ہر روز چھ گھنٹے ریت میں ’دفن‘ ہونا ہوتا ہے اور یہ کورس نو دنوں پر محیط ہے۔ ریت کے ٹیلوں میں ’دفن‘ تمام افراد کے لئے لازم ہے کہ وہ چند گھنٹے سورج کی شعاعوں کی تپش براہ راست برداشت کریں۔ یہاں ایسے لا علاج مریضوں کی صحت یابی کے لئے دعا بھی کی جاتی ہے جو ڈاکٹروں کے علاج معالجے سے مایوس ہوچکے ہوتے ہیں۔بلاشبہ یہ لوگوں کی اُمید ہی ہے کہ وہ گرمیوں کے مہینے میں 42 ڈگری درجہ حرارت میں بھی جھل کے ’مقدس ‘ درخت کے اردگرد خود کو اس آس کے ساتھ دفنائے ہوئے ہیں کہ وہ دوبارہ صحت یاب ہوجائیں گے۔

Image Source: Screengrab

عام طور پر اس درگاہ پر بہت سے زائرین دور دراز علاقوں سے آتے ہیں، ان میں سے ایک نے بتایا کہ وہ ہر جمعرات کو درگاہ پر حاضری دیتا اور مٹی کا دیا جلاتا ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ ریت کے ذریعے علاج کا یہ سلسلہ کچھ ہی سال قبل شروع ہواہے۔ پہلے یہاں ایسا کوئی کام نہیں ہوتا تھا۔ پہلے اردگرد کے لوگ درگاہ پر ہر جمعرات کو منتیں مانگنے کے لئے حاضری دیا کرتے تھے۔

Image Source: Screengrab

دریں اثناء، ماہرینِ صحت ریت کے ذریعے علاج کے اس طریقے پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہیں بلکہ جدید میڈکل سائنس تو اس قسم کے طریقہ علاج کو مسترد کرتی ہے کیونکہ ان کے نزدیک یہ محض وقت کا زیاں ہے۔ اس طریقہ علاج سے بعض اوقات مریضوں میں ریت کے یہ ذرے انفیکشن میں اضافے کا باعث بھی بنتے ہیں جس سے مریض کی حالت زیادہ بگڑ جاتی ہے۔بہرحال یہ طریقہ علاج درست ہے یا نہیں؟ یہاں پر زیادہ اہمیت لوگوں کے اعتقاد اور یقین کو حاصل ہے جو اس علاج کو درست تصور کرتے ہیں۔

جدت کے اس دور میں اس طرح کے دلچسپ حقائق سوشل میڈیا کے توسط سے ہم تک پہنچتے ہیں جو صارفین کے لئے بھی حیرت کا باعث بنتے ہیں۔ اسی طرح اکثر انٹرنیٹ پر ہمیں غیر مرئی مخلوقات کی پُراسرار حرکات کی ویڈیوز بھی دیکھنے کو ملتی ہیں جو کافی وائرل بھی ہوتی ہیں۔ ان ویڈیوز میں کبھی کسی گھر یا عمارت میں بھوتوں کی پُراسرار حرکتیں دیکھائی جاتی ہے تو کبھی پارک میں کسی غیر مرئی مخلوق کو جھولا جھولتے ہوئے دیکھایا جاتا ہے۔

اسی حوالے سے گزشتہ دنوں کراچی کے علاقے گلشنِ اقبال میں سرکاری دفاتر کے مرکز سوک سینٹر کے ایک کمرے کی ویڈیو بھی منظر عام پر آئی جس میں کچھ خوفزدہ کرنے والے مناظر دیکھنے کو ملے۔ تاہم، سرکاری ذرائع نے اسے کسی کی شرارت قرار دیتے ہوئے اس طرح کی صورتحال کی تردید کی۔

Story Courtesy: Daily Pakistan


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format