حریم فاطمہ کے قتل میں ملوث خاتون ملزمہ گرفتار، جرم کا اعتراف کرلیا


0

گزشتہ مہینے صوبہ خیبر پختونخواہ کے علاقے ڈسٹرکٹ کوہاٹ میں ایک چار سالہ بچی کو اغواء کے بعد زیادتی اور پھر قتل کردیا گیا تھا۔ جس پر اب پولیس کی جانب سے ایک مشتبہ خاتون کو بچی کے قتل کے الزام میں حراست میں لے لیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ڈسٹرکٹ کوہاٹ کے علاقے خٹک کالونی کے ایک نالے سے ایک 4 سالہ کمسن بچی کی لاش برآمد ہوئی تھی۔ اس سلسلے میں کوہاٹ کے ایک رہائشی نے اپنی پوتی کے لاپتہ ہونے کے حوالے سے تھانے میں گمشدگی کی ایف آئی آر ایک روز قبل ہی درج کروائی تھی.

واقعے کے خلاف درج ہونے والی ایف آئی آر کے مطابق متاثرہ بچی کا نام حریم شاہ تھا، جو گھر سے باہر دیگر بچوں کے ساتھ کھیلنے کے لئے گئی تھی، لیکن اس کے بعد سے وہ واپس نہیں آئی ہے۔ بعدازاں بچی کے اہلخانہ اور پولیس کی جانب سے پوری رات بچی کی تلاش کی گئی لیکن افسوس کے ساتھ جمعرات کو خٹک کالونی کے مقامی افراد کو متاثرہ بچی کی لاش ایک نالے سے ملی۔ اس موقع پر علاقہ مکین کی جانب سے احتجاج کرتے ہوئے مطالبہ کیا گیا تھا کہ ملزمان کو جلد از جلد گرفتار کرکے کیفرکردار تک پہنچایا جائے۔

چنانچہ اس کیس کے حوالے سے اطلاعات ہیں کہ اس کیس اہم پیش رفت سامنے آئی ہے، جس میں ایک خاتون کو حراست میں لیا گیا، جس میں ملزمہ نے قتل کا اعتراف کرتے ہوئے بتایا کہ متاثرہ بچی کے والد نے اس کے شادی کے رشتے پر انکار کیا تھا، لہذا اس وجہ سے اس نے بچی کو قتل کیا۔

زرائع کا کہنا ہے کہ متاثرہ بچی حریم فاطمہ کے والد نہیں چاہتے تھے کہ اس کے بھائی کی شادی متعلقہ خاتون سے ہو، لہذا انہوں نے اس کے رشتے سے انکار کردیا تھا، جس پر اشتعال میں آکر خاتون نے گھنونے جرم کا انتخاب کیا۔

واضح رہے اس سے قبل 28 مارچ کو اس کیس میں ایک اہم پیش رفت سامنے آئی تھی، جس ایک سی سی ٹی وی فوٹیج میں دیکھا گیا تھا کہ ایک نقاب پوش خاتون حریم کو اپنے ساتھ لیکر جا رہی ہے۔

اس موقع پر ڈی پی او کا کہنا تھا کہ سی سی ٹی وی فوٹیج میں تھوڑی ہی دیر کے بعد وہی خاتون دوبارہ گزر رہی ہیں، تاہم اس دوران اس کے ساتھ بچی موجود نہیں تھی، لہذا پولیس نے تفتیش کا دائرہ وسیع کیا اور متعلقہ خاتون کو حریم کے خاندان کی جانب سے شناخت کے بعد خاتون کو گرفتار کرلیا تھا۔

خیال رہے متاثرہ بچی کے اہلخانہ کی جانب سے ابتداء میں یہ دعوی بھی سامنے آیا کہ بچی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بھی بنایا گیا ہے۔ بعدازاں میڈیکل رپورٹ سامنے آنے پر تصدیق ہوئی کہ بچی کو قتل سے قبل زیادتی کا نشانہ بھی بنایا گیا تھا جبکہ بچی کی موت کی وجہ گلا گھونٹنے سے ہوئی۔

یاد رہے ایسا ہی ایک بربریت کا واقعہ کچھ عرصہ قبل چارسدہ کے علاقے شیخ کلی میں پیش آیا تھا، جہاں ڈھائی سالہ معصوم بچی کو اغواء کرنے کے بعد زیادتی کا نشانہ بنایا گیا اور پھر اسے انتہائی وحشيانہ انداز میں قتل کردیا گیا تھا۔ بعدازاں ملزمان نے متاثرہ بچی کی لاش کھیتوں میں پھنک کر فرار ہوگئے تھے۔ تاہم پولیس کی جانب سے ملزمان کو جلد ہی گرفتار کرلیا گیا تھا۔

Story Courtesy: ARY NEWS


Like it? Share with your friends!

0

What's Your Reaction?

hate hate
0
hate
confused confused
0
confused
fail fail
0
fail
fun fun
0
fun
geeky geeky
0
geeky
love love
0
love
lol lol
0
lol
omg omg
0
omg
win win
0
win

0 Comments

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Choose A Format
Personality quiz
Series of questions that intends to reveal something about the personality
Trivia quiz
Series of questions with right and wrong answers that intends to check knowledge
Poll
Voting to make decisions or determine opinions
Story
Formatted Text with Embeds and Visuals
List
The Classic Internet Listicles
Countdown
The Classic Internet Countdowns
Open List
Submit your own item and vote up for the best submission
Ranked List
Upvote or downvote to decide the best list item
Meme
Upload your own images to make custom memes
Video
Youtube, Vimeo or Vine Embeds
Audio
Soundcloud or Mixcloud Embeds
Image
Photo or GIF
Gif
GIF format